سلطان رضیہ بنت سلطان شمس الدین التمش

از منتخب التواریخ 634ھ1236/ء میں تخت پر بیٹھی اس نے اپنے پیش نظر عدالت وانصاف کا مدعا رکھا اور ان مشکل کاموں کو حل کرنے کی کوشش کی جس میں پیچیدگیاں پیدا ہوگئیں تھیں۔ کرم ورزی کا وہ طریق کار جو عورتوں کے لیے اسی طرح معیوب تھا جس طرح مردوں کے لیے بخل۔ سلطان رضیہ نے اس پر عمل …

مزید پڑھیں

سلطان رکن الدین فیروز شاہ بن شمس الدین التمش

از منتخب التواریخ اپنے والد کے عہد حکومت میں سطان رکن الدین فیروز شاہ چند مرتبہ بدایوں کے اضلاع کا مختار رہا تھا۔ اس کے بعد چتر شاہی اور عصائے اختیارات بھی حاصل کیا تھا اور جب لاہور کے سیاہ و سفید کا مالک تھا تو اس کی حیثیت ولی عہد کی تھی۔ سلطان التمش کے انتقال کے بعد تمام …

مزید پڑھیں

سلطان شمس الدین التمش

از منتخب التواریخ 607ھ1210/ء میں دہلی کے تخت پر جلوہ افروز ہوا۔ التمش76؎ کی وجہ تسمیہ یہ ہے کہ اس کی پیدائش چاند گرھن کی شب کو ہوئی اور تُرک ایسے بچہ کو التمش کہتے ہیں۔ اس کا باپ قبائل ترکستان کا سردار تھا۔ اس کے رشتہ دار ایک روز التمش کو سیر کے بہانے باغ میں لے گئے اور …

مزید پڑھیں

سلطان معزّالدین محمدسام المعروف بہ سلطان شہاب الدین محمد غوری

از منتخب التواریخ معز الدین کا بڑا بھائی سلطان غیاث الدین غوری، عراق اور خراسان کا بادشاہ تھا۔ سلطان شہاب الدین غوری اسی کے نائب السلطنت ہونے کی حیثیت سے غزنی میں تخت نشین ہوا۔ اپنے نام کا خطبہ پڑھوایا اور سکہّ جاری کیا نیزاپنے بڑے بھائی کے حکم سے ہندستان پر لشکر کشی کی اورنعرۂ غزوہ اور جہاد بلند …

مزید پڑھیں

انت بھئے رت بسنت میرو

قرۃالعین حیدر لکڑی کا چھوٹا سا سفید پھاٹک کھول کر ٹونی پنیزی کی کیاری میں کود آیا۔ چاروں اور پھول کھلے تھے۔ زمین میں ابھی پانی دیا گیا تھا۔ بھیگی ہوئی گھاس میں ٹونی کے چھوٹے چھوٹے فل بوٹ چمکنے لگے۔ چند کنکروں کو ادھر اُدھر ٹھوکر مار نے کے بعد اس نے فاتحانہ انداز سے ہرے رنگ کے پردوں …

مزید پڑھیں

آسماں بھی ہے ستم ایجاد کیا!

قرۃالعین حیدر جولائی ۴۴ء کی ایک ابر آلود سہ پہر جب وادیوں اور مکانوں کی سرخ چھتوں پر گہرا نیلا کہرا چھایا ہوا تھا اور پہاڑ کی چوٹیوں پر تیرتے ہوئے بادل برآمدوں کے شیشوں سے ٹکڑا رہے تھے۔ سوائے کے ایک لائونج میں‘ تاش کھیلنے والوں کے مجمع سے ذرا پرے ایک میز کے گرد وہ پانچوں چپ چاپ …

مزید پڑھیں

سر را ہے

قرۃالعین حیدر موسم گرما کے چاند کی کرنیں دور دور تک سفیداور بھوری چٹانوں پر بکھر گئی تھیں۔ اور ہواؤں میں رات کے پھولوں کی تیز مہک اڑ رہی تھی۔ اور دیواروں کے پرے ہوٹل کونٹی نینٹل میں شومین کا ’’ کارینول ‘‘ بج رہا تھا۔ اور چنار کے درختوں کے نیچے رسپنا کا نقرئی پانی نیلگوں سنگریزوں پر سے …

مزید پڑھیں

کیکٹس لینڈ

قرۃالعین حیدر اب خزاں بھی واپس جانے والی ہے۔ اور سفیدے کے جنگل پر ہریالی اتر رہی ہے اور جھیل کے پرلے کنارے تک پھیل آئے ہیں۔ اور جب سبزبانس کا جھنڈ پانی کی سطح پر جھک کر ہوا میں ڈولتا ہے تو چپکے سے رونے کو جی چاہتا ہے۔ سفیدے کا چھوٹا سا جنگل اس طرح چپ چاپ کھڑا …

مزید پڑھیں

جب طوفان گذر چکا

قرۃالعین حیدر تو کبوتر آسمانوں سے نیچے اترا۔ اور اس کی چونچ میں زیتون کی ایک سبز ڈالی تھی اور اس ڈالی کو دیکھ کر وہ سب زمین کی اس وادی میں پہنچے اور خدا وند خدا کی بزرگی کا نشان قائم کرنے کے لیے آس پاس کی پہاڑیوں کے نیلے بھورے پتھر جمع کرکے انہوں نے ایک عبادت گاہ …

مزید پڑھیں

برف باری سے پہلے

قرۃالعین حیدر ’’ آج رات تو یقینا برف پڑے گی‘‘۔ صاحب خانہ نے کہا ۔ سب آتش دان کے اور قریب ہو کے بیٹھ گئے۔ آتش دان پر رکھی ہوئی گھڑی اپنی متوازن یکسانیت کے ساتھ ٹک ٹک کرتی رہی۔ بلیاں کشنوں میں منہ دیئے اونگھ رہی تھیں‘ اور کبھی کبھی کسی آواز پر کان کھڑے کر کے کھانے کے …

مزید پڑھیں