غزلیں

سرفراز آرش کی غزلیں

Facebook تجربہ روز جسے اس کا نیا ہوتا ہے پیڑ سے پوچھیے گا راستہ کیا ہوتا ہے یاد کرتا ہوں تو یاد آتا ہے تم یاد ہی تھے چابی ملتی ہے تو صندوق کھلا ہوتا ہے آنکھ روتی ہے تو امید پنپ اٹھتی ہے پت جھڑ آتا ہے تو یہ …

Read More »