مرکزی صفحہ » فکشن (صفحہ 2)

فکشن

جہاں کارواں ٹھہرا تھا

قرۃالعین حیدر اس سنسان اکیلی روش پر نرگس کی پتیوں کا سایہ جھگ گیا۔ بے کراں رات کی خاموشی میں چھوٹے چھوٹے خداؤں کی سرگوشیاں منڈلا رہی تھیں۔ پیانو آہستہ آہستہ بجتا رہا اور اسے ایسا لگا جیسے ساری دنیا ، ساری کائنات ایک ذرّے کے برابر بھی نہیں ہے اور اس وسیع خلا میں صرف اس کا خیال، اس …

مزید پڑھیں

مونا لیزا

قرۃالعین حیدر پریوں کی سرزمین کو ایک راستہ جاتا ہے شاہ بلوط اور صنوبر کے جنگلوں میں سے گزرتا ہوا جہاں روپہلی ندیوں کے کنارے چیری اوربادام کے سایوں میں خوب صورت چرواہے چھوٹی چھوٹی بانسریوں پر خوابوں کے نغمے الاپتے ہیں۔ یہ سنہرے چاند کی وادی ہے ۔ Never Never Land کے مغرور اور خوب صورت شہزادے ۔ پیٹرپین …

مزید پڑھیں

رقصِ شرر

قرۃالعین حیدر پارٹ وَن- کشتی پر جیسو مرایا! ہُم۔ جیسو مرایا !! (بالکل ولایتی ہو) اوہ۔ ادھر دیکھو ۔ چھتر منزل کے نیچے نیچے درختوں کے سائے میں گومتی کا رنگ کتنا گہرا سبز نظر آرہا ہے۔ تمہاری آنکھوں کا رنگ بھی تو ایسا ہی ہے۔ دھندلا سا سبز اور چھلکتا ہوا جیسا۔ ہوں۔ کیسی __ میرا مطلب ہے کہ …

مزید پڑھیں

ہم لوگ

قرۃالعین حیدر ہاؤ __ ہوّہ __ ہلو لیو ٹیننٹ__ اہم __ ٹٹ ٹٹ __ فلکس __ یپ__ مے فیئر__ یاہ__ او کے __ ٹیڈل اووسویٹی پائی __ چیریوسیم __ اور دوسرے لمحے ریٹا میری بہن نظروں سے اوجھل ہوجاتی ہے۔ جیسے آپ ایک بار پلک جھپک کر کہیں ’’ جیک رو بنسن‘‘ میری آٹھ سلنڈرز والی موٹر پانی کے تیز …

مزید پڑھیں

زندگی کا سفر

قرۃ العین حیدر ’’میرے افسانے‘‘ ___ مجھ سے کہا گیا ہے کہ میں اپنے افسانوں کے متعلق بھی چند سطریں لکھوں اور مجھے یہ سوچ کر ہنسی آرہی ہے کہ میں اس قدر زبردست ادیب ہوں کہ مجھ سے اپنے افسانوں پر تبصرہ کروایا جارہا ہے ۔ کیونکہ میں نے اب تک گنتی کی چند کہانیاں لکھی ہیں اور کبھی …

مزید پڑھیں

اودھ کی شام

قرۃالعین حیدر عجیب __ بے حد عجیب__ تو تم میرے ساتھ نہیںناچوگی__ نہیں۔ کیوں کہ تم انگریز ہو۔ اور اعلیٰ خاندانوں کی ہندوستانی لڑکیوں کا فوجیوں اور خصوصاً امریکن اور انگریز فوجیوں کے ساتھ رقص کرنا بڑی ویسی بات ہے اور جو دیوزاد سا فوجی پچھلے آدھ گھنٹہ سے برابر تمہارے ساتھ لڑھک رہا ہے وہ تو ہندوستانی ہے اور …

مزید پڑھیں

ایں دفتر بے معنی ۔۔۔۔۔

قرۃ العین حیدر نہ جانے کیسا پاگل پن تھا ۔ انوکھا اور دل چسپ ۔ پر اب تو کہکشاں کا یہ نقرئی راستہ پریوں کی سرزمین تک پہنچنے سے پہلے ہی ختم ہوچکا ہے۔ کیسی تھکن، کیسی اکتاہٹ، کیسی بے کیفی۔ آدھے جلے ہوئے سگرٹوں کا بجھا بجھا دھواں فرن کے خشک پتّوں کے اوپر سے گزرتا ہوا اندھیرے میں …

مزید پڑھیں

لیکن گومتی بہتی رہی

نشاط محل ہوسٹل کے ڈرائنگ روم میں پیانو بہت مدھم سُروں میں بج رہا تھا۔ اوما ریڈیو پر پروگرام ’’ پنکھڑیاں‘‘ کے لیے گرباکی مشق کرواتے کرواتے اچھی طرح تھک چکی تھی۔ سندھ کے کنارے __ اب تو جیون ہارے __ اب تو جیون ہارے __ اکتاہٹ کی انتہا۔ نشاط کا سارا اپرفلور بالکل خاموش تھا۔ نیچے صرف پیانو بج …

مزید پڑھیں

ٹوٹتے تارے

انجیر اور زیتون کے درختوں اور ستارۂ سحری کے پھولوں سے گھری ہوئی کسی جھیل کے خاموش اور پر سکون پانیوں میں زور سے ایک پتھر پھینکنے سے لہروں کا لحظہ بہ لحظہ پھیلتا ہوا ایک دائرہ سا بن جاتا ہے نا! یا جب کوئی تھکا ہارا مطرب رات کے پچھلے پہر اپنے رباب پر ایک آخری مضراب لگا کر …

مزید پڑھیں

آہ ! اے دوست

غمِ روزگار کو بھلا دینے کے لیے آؤ اورنج اسکویش پئیں۔ کچھ طلسماتی خوابوں کی باتیں کریں۔ تم یوں ہی بیٹھے بے وقوف بنتے رہو تو مجھے زیادہ اچھے لگو گے۔ بڑا اچھا مشغلہ ہے۔ ان سبز پردوں کی دوسری طرف انگور کی بیلوں سے ڈھکے ہوئے برآمدے میں مہادیو جی اپنی کلاس لے رہے ہیں۔ ایک دو تین۔ چھنن …

مزید پڑھیں