مرکزی صفحہ » تاریخ » ارسلان شاہ بن مسعود بن ابراہیم بن سلطان مسعود

ارسلان شاہ بن مسعود بن ابراہیم بن سلطان مسعود

از منتخب التواریخ

تخت نشین ہوتے ہی اس نے اپنے تمام بھائیوں کو گرفتار کرلیا، مگر بہرام شاہ بھاگ کر سلطان سنجر کے پاس چلا گیا جو اس کا خالہ زاد بھائی تھا۔ سلطان سنجر نے ہرچند سفارشی خطوط لکھے مگر ارسلان شاہ کے کان پر جوں تک نہ رینگی جس کا نتیجہ یہ ہوا کہ سلطان سنجر نے مجبور ہوکر اس پر چڑھائی کردی۔ ارسلان شاہ تیس ہزار فوج لے کر اس کے مقابلے کے لیے آیا مگر شکست کھائی اور ہندستان کا رخ کیا۔ سلطان سنجر چالیس روز غزنی میں رہا۔ پھر تمام علاقہ بہرام شاہ کے حوالے کرکے لوٹ گیا۔ ارسلان شاہ ہندستان سے ایک بڑے لشکر کے ساتھ غزنی پہنچا۔ بہرام شاہ ا س کے مقابلے میں کھڑا نہ ہوسکا اور بامیان کے قلعہ میں بند ہو کربیٹھ گیا۔ سلطان سنجر کو جب اس کا علم ہوا تو وہ مدد کو آیا اور بہرام شاہ نے دوبارہ غزنی پر قبضہ کرلیا۔ ارسلان شاہ گرفتار ہوا اور 510ھ؍1116ء اسے قتل کروادیا گیا۔ ارسلان شاہ نے 7سال تک حکومت کی۔

ہمارے بارے میں admin

یہ بھی ملاحظہ فرمائیں

معزالدین کیقباد

از منتخب التواریخ سلطان بلبن نے خسرو خان کو اپنا ولی عہد مقرر کیا تھا …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے